Swift

Iftikhar Alvi


Intro
  • Self Employed at Alvi Electric
  • Studied Graduated
  • From Lahore, Pakistan
  • Iftikhar_Alvi (Instagram)


  • Trekking My Life

  • میں لاہور میں رہتا ہوں اور الیکٹریکل سامان کا کاروبار کرتا ہوں۔ 1996 سے سیاحت کررہا ہوں۔ 1997 میں سیف الملوک کا پہلا ٹریک کیا تھا۔ تمام قابلِ ذکر مقامات کی سیاحت کے دوران اکثر پیدل سفر کرتا تھا جیسے ہنزہ میں التر پیک کا ٹریک اور ناران میں سیف الملوک کا ٹریک اور سکردو سے سد پارہ جھیل کا ٹریک یا نلتر میں چار جھیلوں تک کا ٹریک کیا جس سے ٹریکنگ کا شوق پیدا ہوا اور گاڑی پر جانے والے مقامات کا دیدار ختم کرکے باقاعدہ ٹریکنگ بمعہ کیمپنگ کا آغاز 2008 میں شروع کیا جس میں ناران میں دودی پتسر اور آنسو جھیل کا ٹریک اور مکشپوری ٹریک اور نیلم وادی میں اڑہنگ کیل کا ٹریک کیا تھا۔ پھر اگلے سال جون میں رائی کوٹ پل سے فیرئ میڈوز تک جانا اور واپسی اور نلتر میں چار جھیلوں پر ٹریک اور کیمپنگ شامل ہے۔ 2009 میں ہی ستمبر کے اختتام پر ناران سے دواریاں گاؤں براستہ رتی گلی جھیل کا سولو ٹریک کیا تھا۔ پھر 2010 میں برف باری میں موسی کا مسلاء پہاڑ کا ٹریک اور سیف الملوک جھیل کا ٹریک کیا۔ 2011 میں دودی پتسر اور سرال جھیل کا ٹریک کیا پھر 2011 میں ہی سوات میں ٹریکنگ کا آغاز کیا کنڈول خپیرو جھیلیں ازمس جھیل کا ٹریک۔ 2012 میں کچی کنی پاس کا ٹریک۔ اور نیلم وادی کشمیر میں چٹا کٹھا جھیل اور سروالی چوٹی کے بیس کیمپ اور اس سے اوپر ایک بے نام پاس کا ٹریک کیا۔ 2013 میں ددریلی پاس کا ٹریک اور گودر جھیل کا ٹریک کیا۔ 2015 میں برف باری میں اناکار جھیل کے ٹریک کی ناکام کوشش کی اور بٹولال بانڈے سے واپس آگئے۔ پھر اکتوبر 2015 میں برفباری میں لالکو سے اوشیرئی درہ کا ٹریک براستہ سید گئی جھیل کیا۔ 2016 میں لواری ٹاپ سے اوپر ڈبارے جھیل دریافت کی۔ اور اپر دیر بیاڑ گاؤں سے شندور کی تین جھیلیں ایکسپلور کرتے ہوئے شڑ پاس اور سوات اور دیر میں تقریبا" پچیس جھیلیں ایکسپلور کیں۔ 2017 میں لالکو سے درال پاس اور دروازہ جھیل اور دروازہ پاس تک ٹریک کیا لیکن زخمی ہونے کی وجہ سے بحرین اترنا پڑا۔ 2019 میں مستوج جھیل جانشائی درہ اور اندرب جھیل نیگور پاس پر چار جھیلوں کا ٹریک کرکے مہوڈنڈ اترا اور کچی کنی پاس کی جانب نیل سر اور خڑ جھیل سے اوپر پہاڑ پر دو جھیلوں کا ٹریکس کیا ہے۔ سیف الملوک دودی پتسر سرال اور اس کے نزدیک دو بے نام جھیلیں لولوسر جھیل بوڑاوائی سے آگے اوپر ایک بے نام جھیل رتی گلی جھیل کالا سر جھیل چٹاکٹھا جھیل سروالی چوٹی کے نزدیک ایک چھوٹی جھیل نلتر کی چار جھیلیں سد پارہ جھیل شنگریلا جھیل اپر کچورا جھیل دھماکہ جھیل کنڈول جھیل ازمس جھیل چمبر گائی جھیل لوئے پنڑ غالے وادی میں چھ بے نام جھیلیں شاٹ سر جھیل زلم کوٹ جھیل غبرگئے ڈنڈے کی حڑواں جھیلیں جوارا جھیل ٹکئی جھیل بر چمبر پاس پر دو بے نام جھیلیں شڑ پاس پر ایک بے نام جھیل شڑوادی میں ایک بے نام جھیل بیاڑ گاؤں میں شندور کی تین جھیلیں دروازہ جھیل دیسان میں چھوٹی جھیل گودر جھیل مہوڈنڈ جھیل سیف اللہ جھیل سوڈو پنڈغال جھیل نیل سر جھیل خڑ جھیل جبہ جھیل پنالشے جھیل ددریلی پاس پر دو جھیلیں ددریلی پاس کی دوسری جانب تین جھیلیں امبیش جھیل ہنڈرپ جھیل شندور پاس کی جھیلیں مستوج جھیل اندرب جھیل سر جھیل کٹورہ جھیل , کڑھ بانڈا جھیل اور گردو نواح کی تین جھیلیں دیکھ چکا ہوں۔ ان میں سے کافی جھیلوں کا ایک دو مرتبہ سے زیادہ وزٹ یا ٹریک کیا ہوا ہے
Click here to view my 

Feedback/Comments

Weather in Waadi Swat